Afsana 052 محبت آزمائش ٹھہری از روشنی

محبت آزمائش ٹھہری
از روشنی

ڈائری

22 جون 2000

بادل گھن گرج کر برس رھے ھیں ،دن ھی اندھیرا سا ھو گیا ھے ،تیز ھوائیں کسی طوفان کا پتہ دے رھی ھیں ،باھر موسم خراب اور اندر من خراب ،،،اک تشنگی سی ھے ،جس نے میرے وجود کا احاطہ کیا ھوا ھے ۔۔۔۔اک تلاش ھے جو کبھی منزل پائے گی یا نہیں ۔۔۔۔۔۔تلاش میرے حصے کی محبت کی ،۔۔۔

کیا واقعی محبت میرے گردو پیش میں موجود ھے؟ ،اگر ھاں تو اس کی تپش ،اس کی لو مجھے محسوس کیوں نہیں ھوتی ؟ ۔۔۔۔۔

یا پھر اس کی شدت اتنی مدھم ھے جو احساس کے دائرے میں نھیں نہیں آپاتی یا میری طلب ھی اتنی زیادہ ھے جو یہ محبت مجھے سیراب کرنے کو ناکافی ھے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وریشہ !،وریشہ! کیا بیٹھے بیٹھے سو گئی ھو ؟
دادو نے کمرے کی کھڑکیاں بند کرتے ھوئے کہا

شاید میں اپنے اردگرد کی محبت کو دریافت کر ھی لیتی اگر عین موقع پر میری دادو کی کڑک دار آواز مجھے خیالی دنیا سے حال میں واپس نہ لے آتی ۔

کہاں ،دادو ،میں تو ۔۔۔۔۔۔

چلیں چھوڑیں آپ بتائیں
دادو ،ھم جیسے عام لوگوں کی زندگی میں محبت کیوں نہیں ھوتی؟
اک سوال وارد ھوا اور جواب میں ۔۔

لڑکی ،باؤلی تو نہیں ھو گئی ؟ کیسی بہکی بہکی باتیں کر رھی ھو۔

تجھے تیرے اماں باوا کی محبت محسوس نہیں ھوتی ،جنہوں نے تجھے پال پوس کر جوان کیا

دادو ،ماں باب کو تو اولاد کا دوست ھونا چاھے نا ،ھمارے اماں ابا تو اتنے رعب والے ھیں کہ بس ،،اباجی خود فوجی ھیں تو ھمیں بھی فوجیوں جیسا بنا کر ھی دم لیں گے ،ھر وقت ڈسپلن ،ھر کام کے اوقات ،ابھی اٹھنا ھے ،ابھی سونا ھے ،ابھی بولنا ھے ،ابھی ھنسنا ھے ،حتٰی کہ ابھی سننا ھے

اماں جی ،وہ بس چولہا چکی ،سلائی کڑھائی اور اباجی کے دوستوں کی دعوتوں میں ایسے مگن ھوتی ھیں جیسے ان کی زندگی کا واحد مقصد ھی یہی ھے ،مائیں تو بچوں کی سہیلیاں ھوتی ھیں اور یہاں تو اتنی پابندیاں اور اصول ازبر کرا دیئے گئے ھیں کہ فرمائش و فہمائش کا تصور ھی نہیں ۔

ابھی میری داستان غم جاری ھی تھی ،مگر دادو نے میری بات کو رد کرتے ھوئے اپنی تقریر شروع کر دی

واہ ،بٹیا !واہ ۔۔بڑا گلہ تھا ،کہ بڑی کم گو ھو مگر آج جو بولی ھو تو کیا کمال کیا

اک پل میں ماں باپ کی محبت کو کٹہرے میں لا کھڑا کیا ،

یہ جو تڑ تڑ گولی کی طرح تمہارے منہ سے جھڑ رھے ھیں نا ،اسے سکھانے کے لئے تمہاری ماں بیسیوں بار اک اک لفظ دھراتی تھی ،تم بچپن میں ہکلاتی بہت تھیں ،اک اس کمی کو ھی سو پاپڑ بیل کر دور کیا ،نیند کی سدا کی چور ،نہ خود سوتیں ،نہ ماں باپ کو سونے دیتیں ،چند گھنٹے سوتیں تو اس میں بھی ماں کو سو کام ،۔۔۔تمھارے لئے اس کی محنت تو تھی ھی بے مثال مگر تمہاری بڑھتی عمر کے ساتھ ،تمہاری ماں نے اپنے سارے شوق طاق پر رکھ دیئے کہ تمہاری تربیت مقصود تھی ،بہت سی باتیں ،سوال تمہارے ننھے ذھن کو پریشان نہ کریں ،اس لئے اس نے اپنے جینے کا ڈھنگ ھی بدل دیا اور اب جب تم اس منزل تک پہنچنے ھی والی ھو تمہیں وہ محبت محسوس ھی نہیں ھو رھی

اور تمہارے باوا جو آج تک تمہارے لبوں سے نکلی ھر جائز خواھش پوری کرتے ھیں بچپن میں تم نیند کی دوائی ٹافیاں سمجھ کر کھا گئی تھیں تو تمہارا باپ پیدل ،تمہیں گود میں اٹھا کر شہر لے کر گیا تھا کہ ھڑتال تھی اور پھر چوبیس گھنٹے جو تم نے بےھوشی میں گزارے ،ایک پانی کا گھونٹ بھی تیرے ماں باپ کے حلق سے نہ اترا ،وہ دن اور آج کا دن ۔انہیں ایسا خدا یاد آیا کہ وہ آج تک کوئی نماز قضاء نہیں کرتے کہ کوئی اک وقت دعا کی برکت سے ان کی اولاد محروم نہ رہ جائے۔۔۔اور تجھے ان کی محبت نظر نہیں آتی ،واہ بیٹا واہ

ھائے رے ، دادو آج تو بہت ھائی ڈوز دے دی

بیگم ،روح افزاء آپ کے لئے دل و ذھن کو ٹھنڈا اور تازہ دم کر دے ،،،باھر آندھی ،اندر طوفان ،پتری ،ماجرا کیا ھے؟

اس درد ناک موڑ پر دادا جان نے انٹری دی

آپ کی پوتی کو اپنی بے رنگ زندگی میں محبت نظر ھی نہیں آتی ،پتہ نہیں ھم ساری عمر کیا جھک مارتے رہے ھیں یا پھر نئی نسل کو کیسی محبت چاھیے ؟

ماں جی دھی رانی کے ساتھ اٹھکیلیاں کیوں نہیں کرتی اور اباجی نے ابھی تک کوئی نظم وظم کیوں نہیں لکھی ۔

ھو گیا ثابت کہ یہ چکر نہیں تو محبت وحبت ھی نہیں ۔۔پتہ نہیں اب یہ بوڑھی دادو اور دادا کس گنتی میں آتے ھوں گے؟

دادو ،کر گئیں نا زیادتی مجھ سے زیادہ میرے اماں ابا سے محبت ۔اتنی طرفداری ،لگتا ھے میرے حصے کا سارا التفات انہوں نے بچپن ھی میرے نذر کر دیا اسی لئے تو میں اپنے دکھڑے سنانے آپ کے پاس بھاگی بھاگی آتی ھوں ۔

میں مری مری آواز میں منمنائی

یہ لو بی بی ،نئی پخ ،اب دادی پر بھی دفعہ لگا دی ،محبت ،محبت ھوتی ھے اس میں مقابلہ نہیں ھوتا اور تعریف و توصیف چاھیے تو اسکے لئے خالی محبت ھی نہیں کچھ کار خیر بھی کرنا پڑتا ھے ،

دادو اپنی سنا کر چل دیں اور میں نے اک یاس بھری نظر دادا جان پر ڈالی ،اور بولی آپ کیا کہتے ھیں دادا جانی ،

کیا خشک مزاجی اور سختی محبت کو کیمو فلاج نہیں کر لیتی ،کیا مثبت عمل کے ساتھ مثبت رویے بھی محبت کی پہچان نہیں ھوتے ؟ اک نیا سوال میرے لبوں تک پہنچا

بات صرف اتنی سی ھے بیٹا ،جب تک آپ بے سکون نہ ھوں ،آپ سکون کو نہیں پا سکتے ، آندھی ،طوفان کے بعد ھی چمکدار دن کی قدر محسوس ھوتی ھے ،

ابھی تو آپ محبت کے حصار میں ھو آپ کے سر پہ محبت کا سائبان ھے ،پیروں تلے محبت کی زمیں ،احساس کا جگنو تو تب مٹھی میں آتا ھے جب اس دنیا میں ننگے پاؤں لمبی مسافت طے کرنی پڑے ،جب سر پہ اولے پڑیں اور باؤں میں آبلے تو اس سکون اس وقت کی قدر آتی ھے ،جو ھماری زندگی میں آیا تھا مگر اپنی کم فہمی کی وجہ سے ھم سمجھ ھی نہ پائے

ورنہ یہ جو ماں باپ ھوتے ھیں نا یہ کبھی کبھی اپنی محبت کو دل کے نہاں خانوں میں سینت سینت کر رکھتے ھیں کہ کہیں ان کی بے تاب محبت مستقبل میں ان کے پاؤں کی بیڑی نہ بن جائے
دادا جان اپنی ھی منطق بتاتے گئے ۔

دادا ابو آپ کہتے ھیں تو مان لیتے ھیں ،ورنہ کتنے دن ھوئے ھیں مجھے یہاں آئے ھوئے مگر گھر میں کسی نے میری کمی محسوس کی نہ یاد کیا

اوہ ھو ،،،میں یہاں اک دھواں دار خبر دینے آیا تھا

پگلی نہ ھو تو ،ساری ٹیم ،گاؤں آنے کے لئے روانہ ھو چکی ھے اور تھوڑی ھی دیر میں قدم رنجہ فرمانے ھی والے ھیں اور خاص الخاص کہ آپ کی رضیہ پھوپھو بھی وطن آئی ھوئی ھیں اور انہی کے ساتھ آ رھی ھیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دیکھو رضیہ ،جو بیت گیا ،سو بیت گیا ،گڑھے مردے اکھاڑنے سے کیا حاصل ۔

بدگمانیوں کو دل میں جگہ نہ دو ،

ابا جی نے سنبھل کر کہا

بدگمانی کا یہ داغ دھل سکتا ھے بھیا ،آپ وریشہ کو میری جھولی میں ڈال دیں
پھوپھو نے فرمائش کر دی

مگر رضیہ کاشف بھی تو ۔۔۔

اپنے باپ کی طرح بھینگا ھے۔

تو کیا ھوا بھیا اگر بہن کے لئے بھینگا بہنوئی آپ کو منظور تھا تو آج کیوں دل پر ھاتھ پڑ رہا ھے ۔

پھوپھو ناراض ھوئیں۔

رضیہ وہ ان لوگوں کا دھوکا تھا ،میں قطعی لاعلم تھا ،مجھ سے آشوب چشم کا بہانہ بنایا گیا تھا ،اور اماں ابا نے بھی تو وقت ہی نہ دیا چٹ منگنی ،پٹ بیاہ۔
بس نصیب میں چوک لکھی تھی ۔

ابا جی صفائی میں کہتے گئے

نصیب کو دوش نہ دیں بھیا ،آج میری اولاد میں بھی وھی نقص ھے کتنی اذیتوں سے میں گزری ھوں،لوگوں کی کتنی تضحیک کا نشانہ بنی اور آپ کہتے ھیں ،بس غلطی ھو گئی

پھوپھو کہتے کہتے رو پڑیں۔

تم چاھتی ھو ،انہی اذیتوں سے میری اولاد گزرے ،پھر تمہیں میری محبت کا یقین آئے گا ۔میں اپنی اولاد کو اپنی غلطیوں کی بھینٹ چڑھا سکتا ھوں نہ کسی کی ضد کی۔

ابا جی نے اپنا فیصلہ سنا دیا ،

آپ اسے میری خوشی کہیں یا میری ضد ،اگر آپ نے پوری نہ کی تو میرا آپ کا ناتا ختم

پھوپھو بی ضد پہ اڑ گئی
ایسے تو ایسے ھی سہی ، ۔

اک بحث در بحث اور نتیجہ ندارد۔

ایسا نہ کہو میرے بچو! ،وریشہ بھی میری بچی ھے اور کاشف بھی ۔کیا ھوا جو اک اولاد نے دوسری کی کمی کو اپنا لیا ،میں نے وریشہ تمہیں دی رضیہ ،

اور دادا جان نے فیصلہ سنا دیا

مگر بابا ! ابا جی نے کچھ کہنے کے لئے لب کھولے ھی تھےکہ دادا جان نے ان کی بات کاٹ دی ۔

اگر مگر کچھ نہیں ،اسے میری التجا سمجھو یا حکم ،اپنی بوڑھی ماں کو دیکھو وہ کب تک تم دونوں کی لڑائی میں پسے گی ،اب اس پر اور ظلم نہ کرو ۔ ،بس ھو گیا فیصلہ ۔

ابا جی خاموش ھو کر مسہری پر بیٹھ گئے ،ان کا سر جھکتا چلا گیا ار پھوپھو کی فاتح کی طرح مسکرا دی اور میں ۔۔۔میں تو ڈوب ھی گئی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ کیسی اماوس کی رات میری زندگی میں اتری ،یہ کیسی محبتیں ھیں جو اک محبت کو بچانے کے لئے دوسرے کے خواب گروی رکھ دیتی ھیں

اور میں کیوں احتجاج نہ کروں ،یہ میری زندگی ھے ،میرا جائز حق ۔۔۔۔۔ اور یہ سوچتے سوچتے میں اباجی کے کمرے کی طرف چل دی

جو منظر میری آنکھوں نے دیکھا اس نے سب بدل دیا

دعا کےلئے اٹھے ہاتھ ،،آنسوؤں سے تر چہرہ ،گھٹی گھٹی سسکیاں ،یہ کس بےبسی کا اعلان تھا ،اور دعائیں ،

،میرے مولا! تیری خوشی کے لئے ،اپنے ماں باپ کے حکم کی پاسداری میں، میں نے اپنی محبت کا من ،اعتبار ،خواب سب قربان کر دیا ،اب میری محبت تیرے سپرد ،جس کا سب جہانوں کی محبت سے زیادہ ھونے کا دعوٰی ھے

،میری بغاوت کا علم ڈھے گیا اور میری محبت شرمسار ھو کر چل دی،کیا ھوا جو محبت نے محبت کو آزمائش کے لئے پیش کر دیا

وقت پر لگا کر اڑ گیا اور آزمائش کی گھڑی آپہنچی ،قبول ھے ،کے دو بولوں سے میں نے اپنے سارے حقوق کاشف کے نام کر دیے ،اک محبت کو سرخرو کر دیا

گھونگھٹ نکالے ھزار سوچوں میں گھری اک عجیب سے خوف سے دوچار تھی کہ میں اپنے زندگی کے ساتھی کا ادھورا پن قبول کر پاؤں گی ؟ کیا اسے اس کا جائز مقام دے پاؤں گی یا پھر اس کی کمی میرے اور اس کے درمیان اک خلا بن جائے گی ۔

السلام علیکم محترمہ ،کیا آپ یوگا سے شغف رکھتی ھیں ؟

نظر جس نے نہ اٹھنے کا عہد کیا تھا ،اس عجیب و غریب سوال پر اٹھی تو اٹھی ہی رہ گئی ۔

آپ کون ؟

اور اس وقت یہاں کیوں؟
بےڈھنگے ،بے ربط سوال لبوں سے نکلے

جی ،،،میں آپ کا دلہا کاشف ولد میر علی ،
ادھر سے جواب آیا

جی نہیں ،میں شور مچا دوں گی ۔۔۔۔خبردار ۔۔جو کوئی بدتمیزی کی ،

نہیں ،جی میری کیا مجال ، یہ لیں ،میرا شناختی کارڈ ،میرا پاسپورٹ ،یہ نکاح نامہ ، یہ تو ہو گئے ثبوت ،اب باری گواہان کی تو ۔۔۔۔۔۔۔

دیکھیں جی ،مجھ سے فری ھونے کی کوشش نہ کریں میں جانتی ھوں کہ میرے شوھر بھینگے ہیں اور مجھے ایسے ہی قبول ہیں ،اور آپ نظر آ رہے ہیں کہ ۔۔

محترمہ ،میرا بچپن میں کامیاب آپریشن ھو چکا ھے ،ویسے مجھے جان کر خوشی ھوئی کہ آپ اتنے نیک خیالات رکھتی ھیں ۔
اجنبی اک نئی ہی داستان سنا رہا تھا

میں بلیک بیلٹ بھی ھوں ،آپ جائیے اور آئندہ ایسا مذاق کرنے کا سوچیے گا بھی نہیں ،
میں تین تک گنوں گی ،ایک ،دو ،تین ،

والدہ ،نانو ،نانی ،ماموں ،مامی ، مجھے بھینگا بنا کر پیش کریں ،وہ اس کے بنا نہیں مانیں گی ،

وہ بلیک بیلٹ بھی ہیں ،اس لئے میں آگے نہیں جاؤں گا

شریر انسان ،پہلے اتنے ڈرامے بناتےھو ،اب ھمیں آگے پیش کر رہے ھو ،

چلیں جی ،تو میرا باس کون تھا آپ بھول گئے شاید ۔

دو بہن بھائیوں کو ملانا تھا ،بدگمانی کی چادر کو ھٹانا تھا ،بس اتنی سی بات تھی ،تھوڑا سا رسکی تھا ،مگر میری دھمکی کام کر گئی ،

داداجانی آپ نے میرے ساتھ اچھا نہیں کیا اتنا بڑا دھوکہ ۔

بس بیٹا محبت کبھی کبھی خودغرض بھی بنا دیتی ھے ،اس تکلیف کے لئے معذرت جو تمہیں اور تمہارے بابا کو پہنچی ،یہی تو بدگمانی کو دھو گئی بیٹا ۔

اور اگر ھم آزمائش میں پورا نہ اترتے دادا جان تو آپ کی محبت کا اسٹیٹس کیا ھوتا ؟

یہ لڑکی بہت بولنے لگی ھے ،ویسے سنا تھا یہ ایک دن کی دلہن ھیں؟

بات کو ٹالیں
نہیں دادا جان ۔۔
دیکھیں بیٹا ،جہاں ،جہاں انسانی محبت دم توڑتی ھے ،وہاں خدائی محبت کا ادراک ھوتا ھے ،محبت رستہ بدلتی رھتی ھے اور آخرکار اپنی منزل پا لیتی ھے ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اور آخر میں نے محبت کو پا لیا ،اب کبھی محبت گم جائے تو میں کسی طوفان/آزمائش کا انتظار کرتی ھوں ،جو آئے اور ساری محبت کو تازہ دم کر دے