11 - متفرق اشعار و قطعات

زندگی ڈر کے نہیں ہوتی بسر، جانے دو
جو گزرنی ہے قیامت وہ گزر جانے دو

ایک خوشبو کی طرح زندہ رہو دنیا میں
اور پھر کیا ہے اگر خود کو بکھر جانے دو

سعد اللہ شاہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ملےگی میری بھی کوئی نشانی چیزوں میں
پڑی ہوئی ہوں کہیں میں پرانی چیزوں میں

یہ خوشنمائی لہو کے عوض خریدی ہے
گھلا ہوا ہے نگاہوں کا پانی چیزوں میں

فرزانہ نیناں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ میرے شہر میں آئے گا اور ملے گا نہیں
وہ کرسکے گا بھلا اجتناب، دیکھیں گے

یہی یقین ہمیں سانپ بن کے ڈس لے گا
یہ جانتے ہیں مگر پھر بھی خواب دیکھیں گے

عنبرین صلاح الدین
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔

زندگی پھول کی بتلاتی ہے
زندہ رہنا ہے تو مرنا سیکھو

جان ہی لو گے زباں آنکھوں کی
پہلے تم پیار تو کرنا سیکھو

فاخرہ بتول
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مجھ سے میرا کیا رشتہ ہے ، ہر ایک رشتہ بھول گیا
اتنے آئینے دیکھے ہیں ، اپنا چہرہ بھول گیا

اب تو یہ بھی یاد نہیں ہے ، فرق تھا کتنا دونوں میں
اس کی باتیں یاد نہیں ، اس کا لہجہ بھول گیا

ممتاز راشد
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ ہے ربط اصل سے اصل کا ،نہیں ختم سلسلہ وصل کا
جو گرا ہے شاخ سے گل کہیں تو وہیں کھلا کوئی اور ہے

صابر ظفر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔

کسی صورت تعلق کی مسافت طے تو کرنی ہے
مجھے معلوم ہے تجھ کو سفر اچھا نہیں لگتا

صابر ظفر

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔

میں سہوں کربِ زندگی کب تک
رہے آخر تری کمی کب تک

جس کی ٹوٹی تھی سانس آخر ِشب
دفن وہ آرزو ہوئی کب تک

جون ایلیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عیش ِ امید ہی سے خطرہ ہے
دل کو اب دل دہی سے خطرہ ہے

یاد کی دھوپ تو ہے روز کی بات
ہاں مجھے چاندنی سے خطرہ ہے

جون ایلیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔

کوئی حد بھی ہوا کرتی ہے آخر سادہ لوحی کی
زمانہ سے گلہ ہے، وہ بھی فقدانِ محبت کا

سرور عالم راز سرور
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔