10 - جلدی ہے از ریحانہ قمر

کبھی ملنے کبھی مجھ سے جدا ہونے کی جلدی ہے
محبت میں تجھے بھی کیا سے کیا ہونے کی جلدی ہے

تو میرے فیصلے کیوں لینا چاہے اپنے ہاتھوں میں
نہ جانے کیوں تجھے میرا خدا ہونے کی جلدی ہے

وہ تلوار اِس لیے کھینچے کہ میں بڑھ کر اُسے روکوں
ستمگر کو محبت آشنا ہونے کی جلدی ہے

میں چاہوں دیر تک اُس میں رچے رہنا، بسے رہنا
مگر بوئے محبت کو ہوا ہونے کی جلدی ہے

بچا کر کس طرح رکھوں میں تیرے لمس کا موسم
کہ میرے ہاتھ کو دستِ دُعا ہونے کی جلدی ہے

اُدھر ظالم کو تازہ پھول سے مطلب نہیں کوئی
اِدھر دل کو ہتھیلی پر دھرا ہونے کی جلدی ہے