05 - لوشن کا سوچ سمجھ کر استعمال کریں از ناز حسین

لوشن کو کاسمیٹکس کے لوازمات کا اہم حصہ سمجھا جاتا ہے کیونکہ یہی جلد کی ملائمت اور نرمی برقرار رکھنے کے لیے صدیوں سے خواتین کا آزمودہ نسخہ ہے۔اب مارکیٹ میں جدید طرز اور خوشنما پیکنگ میں لوشن دستیاب ہیں تاہم برسوں پہلے مختلف جڑی بوٹیوں اور پھولوں سے نکا لے گئے رس اور تیل کو لوشن کے طور پر استعما ل کیا جا تا تھا۔آج گردو غبار اور آلودگی کی زیادتی کی وجہ سے لوشن کی اہمیت دو چند ہو گئی ہے کیونکہ خشک اور گردو غبار سے کھردری ہو کر جلد پھٹنا شروع ہو جا تی ہے اور اس پر جھریاں نمایا ں ہو نا شروع ہو جا تی ہیں اس لیے ماہر حسن خواتین کو لوشن کے استعما ل کی اہمیت اور ضرورت سے آگاہ کرتی ہیں۔ میک اپ کے بعد صابن سے ہاتھ منہ دھو نے کے بعد لوشن ایک اہم ضرورت بن جا تا ہے اور اگرا س کا استعمال نہ کیا جائے تو جلد کی قدرتی نمی ختم ہو تی چلی جا تی ہے اور جلد بے رونق ،بھدی اور کھردری ہو جا تی ہے۔ یہاں ہم خواتین کو مختلف لوشنز اور ان کے استعمال کے بارے میں بتائیں گے تا کہ خواتین انہیں روزمرہ زندگی کا حصہ بنا کر اپنی جلد کی بہتر طور سے حفاظت کر سکیں۔
بازار میں اس وقت مختلف لوشن بآسانی مل جاتے ہیں جن میں چہرے کے لئے کلینزنگ لوشن، فریشنز، ایسٹرنجنٹ لوشن، ہاتھوں کیلئے ہینڈ لوشن، جسم کیلئے سن سکرین لوشن، مہاسوں کیلئے اینٹی ایکنی لوشن اورکلینزنگ لوشن وغیرہ شامل ہیں۔
کلینزنگ لوشن:
کلینزنگ لوشن چہرہ کی صفائی کیلئے بہت مقبول ہو چکے ہیں۔ان کی مقبولیت کی ایک وجہ چہرے کی نمی برقرار رکھنا اور جلد کے کمپلیکشن کو ہموار رکھنا ہے جب کہ ان کو اس لیے بھی پسند کیا جاتا ہے کہ یہ کریم کے مقابلے میں زیادہ آسانی سے اورہموار طریقہ سے لگائے جا سکتے ہیں۔ کریم کی مانند لوشن کو موٹی تہہ میں لگانے کی ضرورت نہیں۔ اس لئے یہ زیادہ سستے اور باکفایت پڑتے ہیں۔
ایسٹرنجنٹ لوشن:
ایسٹرنجنٹ لوشن میں عموماً الکوحل، بورک ایسڈ، پھٹکری، مینتھول اور اس جیسی دوسری اشیا شامل کی جاتی ہیں۔ ان کے استعمال سے آپ کی جلد تازگی محسوس کرتی ہے اور اس میں سختی آجاتی ہے۔اچھے اور معیاری ایسٹرنجنٹ کے استعمال سے آپ کو اپنے مسام سکڑ کر چھوٹے محسوس ہوں گے چنانچہ چکنی جلد کیلئے یہ بہت فائدہ مند ہیں اوراسی لئے چکنی جلد کیلئے مفید ہیں، بوتل کیلئے لیبل پر لکھی گئی تحریر کے برعکس آپ کو یہ ایسٹر نجنٹ پورے چہرے پر لگانے کی ضرورت نہیں۔ انہیں صرف مخصوص مقامات پر لگانا چاہئے۔ البتہ اگر آپ کا پورا چہرہ چکنا ہے تو دوسری بات ہے ایک بات ضرور ذہن نشین رکھیں وہ یہ کہ اگرچہ ایسٹرنجنٹ چکناہٹ کو دور کرتے ہیں، لیکن ان کااثر محض عارضی ہوتا ہے کیونکہ وہ جلد کے نیچے چکناہٹ پیدا کرنے والے غدود کی کارکردگی پر اثر انداز نہیں ہوتے۔ ان میں موجود الکحل مساموں کو تنگ کرتے وقت جلد پر جلن کا احساس بھی پیدا کرتے ہیں۔ الکحل میں موجود بخارات بن کر اڑ جانے کی صفت کے باعث آپ کو جلد پر ٹھنڈک اور تازگی کا احساس ہوتا ہے۔ ایک احتیاط ضروری ہے وہ یہ کہ ایسٹر نجنٹ کا ضرورت سے زیادہ استعمال جلد میں خشکی پیدا کرتا ہے، جو ایک تکلیف دہ عمل ہے، خوشبو والا ایسٹرنجنٹ آپ گھر پر بھی تیار کر سکتی ہیں۔ ایسٹرنجنٹ بنا نے کا طریقہ یہ ہے کہ لیموں کا چھلکا لے کر تھوڑے سے الکحل میں پیس لیں اور اس میں کوئی خوشبو ملا کر ویچ ہیزل کی بوتل میں رکھ لیں۔ گھر میں تیار ہونے والے اور کمرشل سطح پر بازار میں ملنے والے ایسٹرنجنٹ میں صرف خوشبو اور پیکنگ کا فرق ہوتا ہے۔
ٹوننگ لوشن:
ٹوننگ لوشن آپ کی جلد کیلئے ضروری ہے۔ اس کے استعمال سے جلد کے مسام تنگ ہو جاتے ہیں۔ جلد میں جان پڑ جاتی ہے۔ اس میں تازگی آجاتی ہے، اور جلد پر پڑی ہوئی لکیریں اور جھریاں عارضی طور پر کم نمایاں ہونے لگتی ہیں۔ ان اثرات کو حاصل کرنے کیلئے مختلف اقسام کی جلدوں کیلئے مختلف اقسام کے ٹوننگ لوشن مارکیٹ میں دستیاب ہیں۔
فریشنرلوشن:
فریشنرلوشن بھی ایک لحاظ سے ایسٹرنجنٹ سے مشابہ ہیں، کیونکہ ان میں بھی الکحل شامل ہے، لیکن خفیف مقدار میں۔ نارمل اور خشک جلد کیلئے ایسٹرنجنٹ کے مقابلہ میں فریشنر کا استعمال بہتر ہے، کیونکہ اس میں الکحل کی مقدار بہت کم ہوتی ہے یا بالکل نہیں ہوتی۔ فریشنر کا اثر بھی جلد پر وہی پڑتا ہے جو ایسٹرنجنٹ کا ہوتا ہے۔ یہ بھی جلد میں ٹھنڈک پیدا کرتے ہیں، اس میں تازگی آتی ہے اور اسے تان کر سخت بنا دیتے ہیں۔
کلینزنگ لوشن یا کلےری فائنگ لوشن:
کلینزنگ لوشن جنہیں کلےری فائنگ لوشن بھی کہا جا تا ہے یہ ایک قسم کا ٹونر ہوتا ہے۔ اس کے استعمال سے جلد کی اوپری سطح پر پائے جانے والے مردہ خلیے اور میل کچیل صاف ہو کر جلد چکنی اور ہموار ہو جاتی ہے۔ کلیری فائنگ لوشن میں وافر مقدار میں الکحل شامل کی جاتی ہے، یہ تاثیر میں تیز قسم کا ہوتا ہے، اس لئے اگر آپ ایسٹرنجنٹ اور فریشنر کے استعمال سے مطمئن ہیں تو پھر کلیری فائنگ لوشن کا استعمال ہرگز نہ کریں۔
موسچرائزنگ لوشن:
تمام موسچرائزنگ لوشن بنیادی طور پر روغنیات سے ہی بنائے جاتے ہیں، چاہے ان کے لیبل پر کچھ بھی کیوں نہ لکھا ہو۔ تاہم سخت جلد تیل میں بھگونے سے ملائم نہیں ہو جاتی۔ دراصل جلد پر لگانے کے بعد یہ لوشن جلد کی خشکی کو عارضی طور پر ایک دوسرے میں پیوست کر دیتے ہیں اور جلد کی نمی کو بخارات بن کر اڑنے سے روک دیتی ہے۔ یہی موئسچرائزر کا اصول ہے۔ جلد کی نمی کو عارضی طور پر قائم رکھ کر وہ خشکی، روکھے پن اور جلد کی سختی سے نجات دلا دیتے ہیں۔ بہت زیادہ چکنی جلد رکھنے والی خواتین ہلکا اور بغیر چکنا ہٹ والا موسچرائزنگ لوشن استعمال کریں، جو تازگی پیدا کرتا ہے اور آپ کی جلد میں نمی کی مناسب مقدار برقرار رکھتا ہے۔ خشک جلد کی حامل خواتین موسچرائزنگ لوشن سے سکون محسوس کریں گی۔ تاہم بہت سی خواتین کو یہ غلط فہمی پیدا ہو جاتی ہے کہ ان کی جلد خشک ہے اور وہ اس کا یہی حل سمجھتی ہیں کہ زیادہ سے زیادہ موسچرائزنگ لوشن استعمال کریں۔ ایسی لڑکیاں جو ابھی سن بلوغت کو بھی نہیں پہنچی ہوں، یہ سوچ کر موسچرائزنگ لوشن کا استعمال کرنا شروع کر دیتی ہیں کہ وہ جلد کی حفاظت کر رہی ہیں۔ اس کے نتیجہ میں ان کی جلد مہاسوں کا شکار ہو جاتی ہے
ہینڈ لوشن :
۔گھریلو خواتین میں ہینڈ لوشن غیر معمولی طور پر مقبول ہو رہے ہیں، کیونکہ انہیں باورچی خانوں میں بہت زیادہ صفائی اور دھلائی کرنا پڑتی ہے۔ ہینڈ لوشن نہ صرف دیکھنے میں اچھے لگتے ہیں بلکہ ان کی خوشبو بھی بھینی ہوتی ہے۔ ان میں وہی اجزا شامل ہوتے ہیں جو موسچرائزر کے ہیں۔
باڈی لوشن:
باڈی لوشن میں بے بی مصنوعات زیادہ مقبول عام ہیں جو پورے جسم پر استعمال کی جا سکتی ہیں۔ یہ مصنوعات صرف بچوں کیلئے ہی مختص نہیں بلکہ وہ تمام خواتین بھی انہیں استعمال کر سکتی ہیں جو انہی تحفظات کی خواہش مند ہیں جو لفظ بے بی کے ساتھ مخصوص ہیں۔ باڈی لوشن کی مقبولیت سے متاثر ہو کر پر فیوم بنانے والی کمپنیوں نے پرفیوم شدہ باڈی لوشن متعارف کروائے ہیں جن کی خوشبو سے جسم مہکنے لگتا ہے، اگر آپ ان مسحور کن خوشبووں اور خوشنما پیکنگ کی دلدادہ ہیں تو ان کی خریداری پر کچھ زیادہ رقم خرچ کرنا آپ کو ناگوار ہرگز نہ ہو گا۔
سن سکرین لوشن:
سن سکرین لوشن کے استعمال کا مقصد سورج کی نقصان دہ شعاعوں سے اپنے جسم کی حفاظت کرنا اور اپنے جسم کو اس طرح ٹین کرنا ہے کہ وہ برے اثرات سے متاثر نہ ہو سکے۔ وہ خواتین جو دھوپ میں زیادہ وقت صرف نہیں کرتیں، انہیں صرف چند دنوں کے لئے یہ مصنوعات استعمال کرنے کی ضرورت ہے، جبکہ کاشتکار مزدور پیشہ اور ایسی دوسری خواتین اسے زیادہ استعمال کرتی ہیں جو تمام دن دھوپ میں محنت مشقت کرتی ہیں۔ سن سکرین ایجنٹ دو طرح سے جلد کی حفاظت کرتے ہیں۔ اول یہ کہ جسم پر پڑنے والی سورج کی شعاعوں کو مختلف سمتوں میں منعکس کر دیتے ہیں اور دوسرے یہ کہ وہ سورج کی اس توانائی کو اپنے اندر جذب کر لیتے ہیں جو جسم پر سرخ چتیاں ڈال دیتی ہے۔ نارمل سن سکرین کے استعمال سے جسم کسی تکلیف کے بغیر ٹین ہو جاتا ہے، اور سورج کی مضر رساں شعاعوں سے جسم پر جھریاں بھی نہیں پڑتیں۔ جن خواتین کی جلد دھوپ سے حساس ہے وہ سن بلاک کو استعمال کرتی ہیں۔ سن بلا ک سورج کی تمام روشنی کو روک دیتے ہیں اور ان لوگوں کیلئے آئیڈیل ہیں جو دھوپ بالکل برداشت نہیں کر پاتے۔ دھوپ کیلئے ایک اور لوشن بھی دستیاب ہے جسے کالا مین لوشن کہتے ہیں، یہ لوشن دھوپ سے جل جانے والی جلد، گرمی دانوں اور سرخ چتیوں پر لگانے سے ٹھنڈک پہنچاتا ہے۔
سیٹنگ لوشن:
سیٹنگ لوشن بالوں کی سیٹ کو برقرار رکھنے کیلئے استعمال ہوتا ہے، اور اسے رولز یاپن کرلز کے ساتھ لگایا جاتا ہے۔ یہ کرلز کو مضبوط بھی بناتا ہے اور دیرپا بھی۔ اس طرح وہ مرطوب آب و ہوا کے باعث کرلز کو خراب ہونے سے محفوظ رکھتا ہے۔ سیٹنگ لوشن بالوں کو نقصان نہیں پہنچاتے کیونکہ ان کا مقصد بالوں کے اوپر الکحل اور وینائل پلاسٹک کی ایک تہہ چڑھا دینا ہے۔ استعمال میں سہولت پیدا کرنے کی خاطر اب یہ لوشن پمپ اسپرے میں بھی دستیاب ہے۔ گیلے تولیہ سے خشک ہوئے بالوں پر اسپرے کی مدد سے لوشن چھڑک دیں اور پھر بالوں کو حسب خواہش کسی بھی سٹائل میں سیف کر لیں۔ بعض لوشنز میں کنڈیشننگ ایجنٹ بھی شامل ہوتے ہیں، حالانکہ ان کی کنڈیشننگ قوت بہت ہی کم ہوتی ہے۔ یہ لوشن بالوں کو کرل کرنے کے علاوہ سیدھے کرنے کیلئے بھی استعمال ہوتے ہیں۔