002 - آیات مبارکہ حدیث نبوی ﷺ

بِسمِ اللہِ الرَحۡمٰنِ الرَحِیم

وَ اِذَا قَامُوۡآ اِلَی الصَّلٰوۃِ قَامُوۡا کُسَالٰی یُرَآءُوۡنَ النَّاس وَلَا یَذۡکُرُوۡنَ اللہَ اِلَّا قَلِیۡلاً

ترجمہ: ارشاد باری تعالیٰ ہے۔ (منافقوں کی حالت کا بیان ہے) اور جب نماز کو کھڑے ہوتے ہیں۔ تو بہت ہی کاہلی سے کھڑے ہوتے ہیں۔ صرف لوگوں کو اپنا نمازی ہونا دکھلاتے ہیں اور اللہ تعالیٰ کا ذکر بھی نہیں کرتے مگر یوں ہی تھوڑا سا۔
(سورہ نساء: رکوع ۲۱)

حدیث:
عمرو بن میمون اودی رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے مروی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک شخص کو نصیحت کرتے ہوئے فرمایا۔ پانچ حالتوں کو دوسری پانچ حالتوں کے آنے سے پہلے غنیمت جانو اور ان سے جو فائدہ اٹھانا چاہو وہ اٹھالو۔
۱: غنیمت جانو جوانی کو پڑھاپے کے آنے سے پہلے۔
۲: غنیمت جانو تندرستی کو بیمار ہونے سے پہلے۔
۳: غنیمت جانو خوش حالی اور فراخ دستی کو ناداری اور تنگدستی سے پہلے۔
۴: غنیمت جانو فرصت اور فراغت کو مشغولیت سے پہلے۔
۵: غنیمت جانو زندگی کو موت آنے سے پہلے۔
(جامع ترمذی۔ معارف الحدیث)