005 - تبصرہ از حنا رضوان

السلام علیکم

بہت ہی خوشی کا مقام تھا جب ون اُردو کا پہلا سالگرہ نمبر اپنے سامنے نظر آیا تو دل سے بے اختیار یہ دعا نکلی کہ یہ میگزین اپنی سوویں سالگرہ بھی منائے۔
میری طرف سے ان سب کو دلی مبارک باد، جن کی کوششوں کے نتیجہ میں ون اردو میگزین کا دوسرا شمارہ سالگرہ نمبر ہمارے سامنے آیا۔ سرِورق سے لے کر اختتام تک ہر چیز بےمثال تھی۔
سرِورق دیکھ کر بے حد خوشی ہوئی۔ سب سے پہلے مونا جی کی عرضِ حال پر نظر پڑی تو سوچا چلتے چلتے اس پر بھی نظر ڈال لی جائے۔
مونا سس کا انداز تو بے حد خوبصورت تھا بلکہ وہ ایک منجھی ہوئی مدیرہ لگی۔ خسرو بھائی کی حمد اور نعت، بنتِ احمد سس کی پیش کردہ آیت ا ور حدیث پڑھ کر ایمان تازہ ہو گیا۔
پھر فٹا فٹ قدم آگے بڑھائے تو کچھ ممبرز کے کئے تبصروں پر نظر پڑی۔ اُنھیں نظر انداز کر کے آگے بڑھنے لگی تو ایک دم سے ٹھٹھک کر رک گئی، حیرانی سے تبصروں کی طوالت پر نظر دوڑائی اور یہ سوچتے ہوئے کہ پتا نہیں اتنے لمبے تبصروں میں کیا لکھا ہے جلدی سے پڑھنا شروع کیا تو داد دیئے بغیر نہ رہ سکی کہ بھئی تبصرہ نگار ہو تو ایسے، اُنھوں نے بہت ہی عمدگی سے ہر چیز پر تبصرہ کیا تھا۔
سمارا سس کی تحریر بابِ لُد بہترین تحریروں میں سے ایک رہی۔ معلوماتی ہونے کے ساتھ ساتھ آپ کا اندازِ بیان بھی زبردست رہا۔ اتنی اچھی تحریر لکھنے کا بہت شکریہ۔
نیسمہ سس کا انتخاب سنہری کرنیں مختصر مگر بہت اچھا پیغام لئے ہوئے تھی اس کے بعد سلمان بھائی کا مضمون اسلامائزیشن آف لاء بھی اچھا لگا۔ دلچسپی نہ ہونے کی وجہ سے جلدی جلدی پڑھا لیکن اپنا مفہوم بیان کرنے میں کامیاب رہا۔
اس کے بعد جلدی سے اپنے من پسند افسانے اور ناولوں کے سیکشن میں پہنچ گئی۔
سب سے پہلے جو تحریر پڑھنے کو ملی وہ تھی دل پسند بھائی کی ''منگلا ڈیم''۔ کافی معلوماتی اور دلچسپ تحریر رہی پڑھنے کے دوران بوریت بالکل نہیں ہوئی۔
آمنہ آپی کی تحریر انٹرنیٹ اور خواتین بہت اچھا موضوع چنا ہے آپ نے۔ وقت کے اعتبار سے بہت ہی اہم اور نازک موضوع۔ واقعی میں انٹرنیٹ پر لڑکیوں کو بہت ہی احتیاط کی ضرورت ہوتی ہے اچھے اور بُرے لوگ تو ہر جگہ ہی ہوتے ہیں جو کسی کو بھی نقصان پہنچانے کو تیار بیٹھے ہوتے ہیں۔
اندازِ بیان بھی خوب تھا آخری پیراگراف بہت اچھا لگا پوری تحریر کا نچوڑ اور اسپیشلی آخری لائن
''ایک زیرک ماں، ایک محتاط بیٹی، ایک مضبوط بہن کی جتنی ضرورت اس صدی میں ہے ہمیں، پہلے کبھی نہیں تھی''۔ بہت خوب، زبردست۔
جرار بھائی کی تحریر عشقِ لاحاصل ہمیشہ کی طرح نئی اور وکھڑی سوچ۔ اندازِ تحریر، خوبصورت الفاظ کا چناؤ اور گہرا فلسفہ ہمیشہ کی طرح زبردست۔۔ یونہی اچھا اچھا لکھتے رہیں ہمیشہ۔
احسان بھائی کا خوفناک بھوت ڈرتے ڈرتے پڑھنا شروع کیا تھا لیکن اینڈ پڑھ کر بہت ہنسی آئی۔ یہ ڈھونگی پیر فقیر جس طرح لوگوں سے پیسے اینٹھتے ہیں نا ان کے بارے میں بہت اچھا لکھا۔ کیپ رائٹنگ۔
سمارا سس کی تحریر کھوٹا سکہ بہت ہی اچھی اور مثبت پیغام دیتی ہوئی تحریر۔ دوسروں پر انگلی اُٹھانے والے لوگ کبھی کامیاب نہیں ہوتے۔ مجھے تو اینڈ بہت اچھا لگا۔ ایسے لوگوں کے ساتھ ایسا ہی ہونا چاہیے۔ آئندہ بھی آپ کی ایسی ہی اچھی اچھی تحریروں کا انتظار رہے گا۔
اور نیسمہ سس نےا پنے افسانچہ میں اپنے ساتھ ساتھ ہمارا حال بھی بیان کر دیا۔ بہت خوب۔
حرا سس کی تحریر تعبیر آشنا ایک عمدہ تحریر، ایک مثبت سوچ، بہترین پیغام، اور زبردست اندازِ تحریر کا مجموعہ تھی۔ اور آخری جملہ تو بہت ہی زبردست تھا کہ ''ترقی کی دوڑ میں شامل ہونے کے لئے میں نے بس کی رفتار کم ہونے کے بجائے اپنی رفتار بڑھا لی تھی''۔ بہت شاندار۔
مونا سس کی تحریر ''ابھی ایک خواب باقی ہے'' بہت خوبصورت اور سبق آموز تحریر تھی۔ ایک چھوٹی سی کہانی میں بہت بڑی بات بیان کر دی۔۔ اُمید ہے اس کہانی کو پڑھ کر ہر کوئی اپنے رشتے کا ایک بار جائزہ ضرور لے گا۔ اتنی اچھی کہانی کا بہت شکریہ۔
ناز سس کی تحریر ''سر۔ ۔ ۔ بابوجی'' پڑھ کر مجھے بہت دکھ ہوا۔ لیکن یہ بالکل نیا موضوع تھا۔ کسی مانگنے والے کو بےعزت کرتے ہوئے ہمیں کبھی احساس نہیں ہوتا کہ ہم کیا کر رہے ہیں اور کل کو ہمارے ساتھ بھی ایسا کچھ ہو سکتا ہے۔ ہمیں ایک بار خود کا احتساب ضرور کرنا چاہیے۔ بہت ہی اچھی اور سبق آموز تحریر تھی۔ مزید تحریروں کا انتظار رہے گا۔
''بلاعنوان'' تحریر بھی بہت اچھی رہی۔ کافی اداس کر دینے والی تھی۔ اور کہانی کے اُوپر لگی چھوٹی سی بچی کی تصویر بہت اچھی لگی معصوم سی۔ کتنی دیر تو میں اس بچی کو ہی دیکھتی رہی۔ یہ کہانی کس نے لکھی یہ تو اگلے شمارے میں پتا چل ہی جائے گا لیکن مجھے پتا نہیں کیوں رضوان بھائی کی لگی یا پھر آمنہ آپی کی۔ (کنفیوژ ہونے والی اسمائیلی)۔
اب پہلے تو وش سس کو ناول شروع کرنے پر بہت مبارک باد۔ آپ نے تو ڈائجسٹ کی رائٹرز کی طرح قسط وار کہانیاں لکھنی شروع کر دیں۔ ابتدا تو بہت اچھی لگ رہی ہے۔ موضوع بھی بہت اچھا چوز کیا ہے۔ بہت اچھے طریقے سے سب کا تعارف کروایا ہے ماریہ کا مضبوط کردار بہت اچھا لگا۔ اُمید ہے اگلی قسط زیادہ مزے کی ہو گی اور تھوڑی لمبی بھی، یہ اس دفعہ کی طرح اتنی چنی منی نہیں ہونی چاہیے۔ اگی قسط کا شدت سے انتظار رہے گا وش یو گڈ لک۔
سلمان بھائی کا لکھا شعر ''لوگ ملتے ہیں بچھڑ جانے کے لئے'' بہت اچھا لگا۔
رضوان بھائی کی مزاحیہ تحریر ''زمانہ بدل گیا پیارے'' ہنس ہنس کر آنکھوں میں پانی آ گیا۔ کہانی پڑھتے ہوئے اُسے ساتھ ساتھ تصور کر رہی تھی اور ہنستی جا رہی تھی۔ کتنی ہی دیر تک اسے یاد کر کر کے مزہ لیتی رہی۔ لفظ ''غنڈیاں'' مجھے بہت پسند آیا۔ مزید ایسی ہی مزے کی تحریروں کا انتظار رہے گا۔ اتنی اچھی کہانی لکھنے پر بہت شکریہ۔
غالب بھائی کا سفرنامہ کافی طویل لگا لیکن دلچسپ تھا اور معلوماتی بھی۔
آئی ٹی کے شعبے میں امان بھائی، سمارا سس، اور نایاب سس کی پرندوں کے متعلق تحریریں پڑھنے کو ملیں کافی معلوماتی تحریریں تھیں۔ اُمید ہے ایسی معلوماتی تحریریں مزید بھی پڑھنے کو ملیں گی۔
شاعری تو سب کی ہی زبردست رہی۔ ''وداعی'' اور ''ماں'' پڑھ کر بہت اداسی ہوئی۔ باقی احسان بھائی، فرید بھائی، اور ناز سس کی شاعری بھی ان کے اعلٰی ذوق کی نشاندہی کر رہی تھی۔۔
عتیق بھائی اور نوید بھائی اپنی مزاحیہ شاعری سے ہنستے ہنساتے ہوئے نظر آئے۔
ایکٹرز کے حالاتِ زندگی میں وحید مراد کے بارے میں جان کر بہت اچھا لگا۔ ہماری نئی جنریشن کی پرانے ایکٹرز کے متعلق معلومات کافی کم ہوتی ہے اُن کے لئے یہ کافی اچھی تحریر ہے
اسپورٹس میں مون سس کی تحریر بھی اچھی رہی۔
آگے کچن نظر آیا تو فٹا فٹ کچن میں گھس گئے لیکن وہاں جاتے ہی گولا کباب اور اسپیگٹی رولز دیکھ کر بھوک چمک اُٹھی۔ لبِ شیریں کی تصویر دیکھتے ہی دل کیا کہ اسے یہیں سے بیٹھے بیٹھے اسٹرا لگا کر چٹ کر جائیں۔
کچن اور گروسری سے متعلق ٹپس بھی خوب رہیں۔
میک اپ اور فیشن کے متعلق ناز سس اور ساحرہ آپیا کی تحریریں بھی اچھی رہیں۔ اُمید ہے اب ہر کوئی احتیاط کرے گا۔ فیشن کے متعلق یہ ساری باتیں تو میں نے اسکول میں ہوم اکنامکس میں پڑھیں تھیں لیکن اب بھول چکی تھی بالکل۔ اُمید ہے اب یاد رہے گا۔ نہیں بھی یاد رہا تو ساحرہ آپیا تو ہمارے پاس ہیں ہی نا۔
''آج کا کام ابھی'' کافی اچھی اور سبق آموز تحریر تھی۔ صرف بچوں کے لئے ہی نہیں بلکہ ہم بڑوں کے لئے بھی۔
سالگرہ سیکشن میں یاز بھائی، طلحہ بھائی، نایاب سس، مینا سس، اور کائنات سس کے گزرے دو سالوں کے بارے میں جان کر بہت اچھا لگا۔ اور فخر سا ہوا کہ میں بھی اس اچھی اور مفید سائٹ کی ایک ادنیٰ سی ممبر ہوں۔
مشن اپ لوڈنگ اور مشن کمپوزنگ کے متعلق ویسے تو کافی کچھ پتا تھا لیکن میگزین میں اتنی ڈیٹل سے پڑھ کر بھی بہت اچھا لگا اور خوشی بھی ہوئی۔
سالگرہ کے کیک کی کہانی بھی زبردست رہی۔ بےچارے اراکین ایک تو کیک کے لئے خوار ہوتے رہے لیکن کیک بھی نہ ملا اور ساحل بھائی نے ہٹ میں بھی بند کر دیا۔
لیکن اگر یہ اراکین ہماری نور فائزہ سس کے پاس چلے جاتے تو یقیناً اُنھیں کیک مل جاتا کیونکہ سالگرہ کا کیک تو اُنھوں نے ہی بنایا تھا نا۔
جرار بھائی کی مزاحیہ تحریر بھی بہت زبردست رہی ہمیشہ کی طرح۔ کاش یہ سب سچ ہوتا یا ہم سب ممبرز مل سکتے تو کتنا مزہ آتا ، پھر ہم اس طرح کی ساری سیلبریشن کرتے واووووووو
خیر تحریر بہت اچھی تھی۔ اندازِ بیان تو ہے ہی اچھا آپ کا۔ خوش رہیں ہمیشہ۔ اور ایسی اچھی اچھی تحریریں لکھتے رہیں۔
فائزہ سس کا سروے بھی اچھا لگا۔ اُمید ہے آئندہ بھی مزید اچھے موضوعات پر سروے پڑھنے کو ملیں گے۔
میگزین کی آخری تحریر آمنہ آپی کی زبردست تھی۔ واقعی ون اُردو پردیس میں رہنے والے ہم لوگوں کے لئے کسی نعمت سے کم نہیں ہے۔ میں تو سوچتی ہوں ون اُردو نہ ہوتا تو میرا کیا ہوتا میرا تو اکیلے حال ہی خراب ہوتا۔ اتنی اچھی تحریر کا بہت شکریہ آپی۔
اور آخر میں نوید بھائی کی نظم تو جان تھی پورے میگزین کی۔
اوور آل پورا میگزین بہت زبردست رہا۔ تمام ساتھیوں نے بہت اچھا کام کیا۔ لکھنے والوں نے زبردست تحریریں لکھ کر میگزین کو چار چاند لگا دیئے۔ اُمید ہے کہ اگلی بار کا شمارہ اس سے زیادہ اچھا اور دلچسپ ہوگا۔ اس کے ساتھ ہی اجازت دیجئے۔

اللہ حافظ