009 - رمضان ہائیکوز از نوید ظفر کیانی

نفسِ امارہ سے آپ ہر جائیں گے

روزہ رکھنے چلے ہیں مگر دیکھنا

دن میں دو چار افطار کر جائیں گے

…۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

روزہ رکھنے کی ہمت میسر سہی

دیدئہ شوق رہنے نہ دے گا کبھی

روز بن ٹھن کے آتی ہے مس نازلی

…۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ان کے طرزِ عمل پر کوئی کیا کہے

روزہ رکھنے کی توفیق نہ ہو سکی

اور افطار میں سب سے آگے رہے

…۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آکے دفتر پریشاں ہے تُو آج بھی

آج بھی سارا اسٹاف روزے سے ہے

ٹائلٹ میں ہے سگریٹ کی بُو آج بھی

…۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ سمے یوں نہ کٹ پائیں گے دوستو

سینما جا کے دیکھیں گے پکچر کوئی

مل کے روزے کو بہلائیں گے دوستو

…۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

روزہ داری میں سب کا ہے رونا جدا

ہم کو سگریٹ کی خواہش نے بیکل کیا

خان صاحب کو نسوار کا غم رہا

…۔۔۔۔۔۔۔۔۔

روزہ رکھ نہ سکیں گے کبھی سیٹھ جی

حکم ربی فراموش کر جائیں گے

توند کی بات ٹالی نہیں جائے گی

…۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کیا خریدیں کہ جب دسترس میں نہیں

اب تو قیمت کھجوروں کی سن کر لگے

روزہ رکھنا غریبوں کے بس میں نہیں