010 - ڈائٹنگ از سلمان سلو

ڈائٹنگ

میری پوری زندگی میں ایک پل
اس مٹاپے کا ملے مجھ کو بدل
اور بےشک جائے میری جاں نکل
ڈائٹنگ میں کر رہی ہوں آج کل

میں نے پوچھا ایک موٹی ''کیٹ'' سے
کر رہی ہو کیوں کنارہ''ریٹ''سے
بولی عاجز آگئی ہوں ''فیٹ'' سے
ڈائٹنگ میں کر رہی ہوں آج کل

کھودی جب فرہاد نے مشکل سے ''لیَک''۔۔
دودھ کی، تو دل ہوا اس کا ''بریک''۔۔۔
بول اٹھی شیریں آئی کانٹ ''ٹیک''۔۔۔۔
ڈائٹنگ میں کر رہی ہوں آج کل

چھ سموسے، آٹھ بسکٹ ساتھ میں
سیب اتنے، جتنے آئیں ہاتھ میں
اور کچھ کھاتی نہیں میں رات میں
ڈائٹنگ میں کر رہی ہوں آج کل

فلم نگری میں ملے گی مجھ کو جاب
میں مٹاپے میں بنی ہوں لاجواب
خواب ٹوٹے اور پھر آخر جناب
ڈائٹنگ میں کر رہی ہوں آج کل