006 - ایسا بھی کبھی نہیں ہوا تحریر: رمیصہ

ایسا بھی کبھی نہیں ہوا

"عید۔۔۔۔۔۔۔۔!! "میں نے زیر ِلب دہرا کر جیسے عید کا لطف لیا۔عید میں صرف ایک ہفتہ رہ گیا تھا۔میری تیاری مکمل تھی۔
میرے سوٹ،میچنگ شوز،جیولری،مہندی کے ڈیزائن کی سلیکشن،عید کارڈز اور عید گفٹس۔۔۔۔۔۔کل کالج میں آخری دن تھا۔عید کے ساتھ ہی ہمیں پہلے ہفتے اور اتوار کی چھٹی تھی اور عید کی اپنی تین۔۔۔۔ایک ہماری پرنسپل نے ازرا ہِ مہربانی دے دی تھی۔۔۔۔
اور یہ ایک ہفتہ کتنا بھاری گزرنا تھا ؟ ٰیہ میں ہی جانتی تھی۔وہ بھی اس صورت میں جب ساری تیاری مکمل ہو۔اب میری تیاری تیاری کی رٹ سے یہ مت سمجھ لیجیے گا کہ گھر میں عید صرف میں ہی مناتی ہوں یا پھر یہ کہ ہمارے گھر میں سب کچھ ہمیشہ ہی ایک ہفتہ پہلے تیار ہو جاتا ہے۔۔۔یہ ایکسیپشن صرف میرے ساتھ تھی۔۔۔۔۔۔کیونکہ۔۔۔میں سب سے بڑی ہوں۔۔۔اور سب سے ڈھیٹ ہوں۔۔۔۔
اور سب سے بد تمیز ہوں۔۔۔۔۔اور سب سے زیادہ بے حس ہوں۔۔۔۔۔لہٰذا کسی کی پرواہ نہ کرتے ہوئے اپنی چیزیں ابو سے ڈائریکٹ پیسے لے کر ڈائریکٹ درزی کو دیتی ہوں۔۔۔۔۔یہ میری امی کا کہنا ہے اور ان سے میرا متفق ہونا ضروری نہیں۔آپ کا متفق ہونا بھی ضروری نہیں کیونکہ ایسی صورت میں ہو سکتا ہے کہانی کہ آخر میں آپ کو اپنی رائے تبدیل کرنا پڑ جائے!!
ہاں تو کہاں پہ تھی میں۔۔۔۔۔۔؟
عید۔۔۔۔۔!! عید کی سہانی صبح۔۔۔۔چمکیلی روشن صبح۔۔۔۔۔۔آہا۔۔۔۔۔کتنا مزا آئے گا۔میں صبح صبح اٹھ کر اپنے کمرے کے واش روم میں نہاؤں گی اور مجھ سے چھوٹے چاروں کامن باتھ روم کے باہر انتظار کریں گے۔۔۔۔اوہوں۔۔۔۔میں عید کا سوٹ پہنوں گی۔۔۔۔۔۔اپنی میچنگ جیولری۔۔۔۔۔۔ہلکی سی لپ سٹک تاکہ امی کو پتا نہ چلے۔۔۔پھر خوشبو کے جھونکے کی طرح باہر آؤں گی جہاں امی بہن بھائیوں کو تیار کر رہی ہوں گی۔۔۔۔میں نزاکت سے بیٹھ کے امی کو دیکھتی رہوں گی۔۔۔۔کام کرتے ہوئے۔۔۔۔پھر بھائی نماز پڑھنے چلے جائیں گے اور امی امبر کے ہاتھ سویاں سارے محلے میں بانٹیں گی۔سویاں بانٹ کر چولہے پہ سالن رکھیں گی۔آٹا گوندھ کر نہا کر کپڑے بدلیں گی۔تب تک میں امی کے کئی دفعہ کہنے پر ایک دفعہ سالن میں چمچ ہلا دوں گی۔پھر گیلے بالوں کو جوڑے میں لپیٹ کر ایک طرف روٹیاں پکائیں گی تو دوسری طرف سالن دیکھیں گی۔ساتھ ساتھ دہی بھلے بن رہے ہوں گے تو ساتھ کباب فرائی ہوں گے۔جلدی جلدی کام نمٹا کر مجھے سیلیڈ بنانے کا کہیں گی۔میں منہ بنا کے سیلیڈ سیٹ کر دوں گی۔پھر ابو آئیں گے ہم سے مل کے کچن میں جائیں گے امی سے ملنے۔جہاں امی صرف سوٹ بدلے ہوئے ہوں گی۔نہ ہار نہ سنگھار۔پیچھے پیچھے چھوٹے چاروں بھی بھوک بھوک کرتے پہنچ جائیں گے۔امی ٹیبل سیٹ کریں گی۔پھر ہم کھانا کھائیں گے۔میرا موڈ ہوا تو برتن اٹھا دوں گی۔ابو اپنے ایک دو دوستوں سے مل کر آفس پارٹی میں چلے جائیں گے۔۔۔۔اور شام کو لوٹیں گے۔۔۔۔میں ،سارہ اور امبر اپنی ساری دوستوں کے گھر باری باری جائیں گے اور ہمیں آتے آتے رات کے آٹھ ،نو تو ہو ہی جائیں گے۔اشعر اور مبشر اپنے دوستوں کے ساتھ گھومنے نکل جائیں گے اور وہ بھی رات کو آئیں گے۔۔۔۔۔۔اور رات کو سب تھکے ہوئے ہوں گے۔۔۔۔۔گہری نیند سوئیں گے۔۔۔شکر ہے اگلے دن چھٹی ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔۔
لیکن ٹھہریے ذرا ۔۔۔میری امی کیا کریں گی۔۔۔؟۔۔۔۔۔امی کی عید۔۔۔۔۔مانا یار بچوں کی عید اپنی عید ہوتی ہے لیکن اپنی ذاتی عید۔۔۔۔۔۔؟میں سیدھی ہو کے بیٹھ گئی۔۔۔۔۔۔۔امی کی روٹین دہرائی۔۔۔۔۔۔۔اور دھک سے رہ گئی۔۔۔۔۔۔
امی کی عید۔۔۔۔۔۔؟وہ چند لمحے جب ہم مل کے کھانا کھاتے ہیں ۔۔۔۔۔۔؟یا جب ہم سارے صبح تیار ہو رہے ہوتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔امی کی عید؟۔۔۔۔۔۔کیا مطلب۔۔۔۔؟امی کی عید۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!
میں نے سر جھٹکا۔۔۔۔۔۔بے یقینی ہی بے یقینی تھی۔۔۔ہمارے جانے کے بعد کیا کرتی ہوں گی امی۔۔۔۔۔؟محلے والوں سے ملتی ہوں گی؟ہمارے پھیلائے ہوئے گند کو سمیٹتی ہوں گی۔۔۔؟خالہ اور ماموں سے بات کرتی ہوں گی۔۔۔۔۔۔؟پر عید کب مناتی ہوں گی۔۔۔۔؟مطلب پیاری سی ذاتی عید۔۔۔!!حق ہاہ۔۔۔۔۔۔۔امی کی عید تو ابو کے ساتھ ہونی چاہیے یا ہمارے ساتھ اور ہم ہی امی کے پاس نہیں ہوتے۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن نہیں اس دفعہ کی عید امی کی سب سے اچھی عیدوں میں سے ایک ہو گی۔۔۔۔۔۔
میں نے صبا کے سامنے اگلے دن کہا۔"کیسے۔۔۔۔۔؟کیا کرو گی تم۔۔۔۔۔؟میں امی کی زندگی میں سولہ سال پہلے کی عید لاؤں گی۔۔۔۔امی ،ابو۔۔۔۔اور عید۔۔۔۔۔ہاؤ رومینٹک۔۔۔۔!!"

"شرم تو نہیں آتی۔۔۔۔!!" صبا نے دھموکا جڑا۔

"یہ مت سوچو کہ وہ میری امی ہیں۔۔۔۔یہ بھی مت سوچو کہ وہ والی امی ہیں جنہیں مجھ میں ایک بھی خوبی نظر نہیں آتی۔صرف یہ سوچو کہ وہ ایک عورت ہیں اور انہیں ایک اپنی پیاری سی ذاتی عید منانے کا حق ہے۔۔۔۔"
"پاگل ان کی ذاتی عید تو تم لوگوں کی عید ہی ہوتی ہے۔۔۔۔۔"

"تسلیم ہے۔۔۔۔۔۔مگر ۔۔۔۔۔۔سارے دن میں کوئی تو دلکش سا لمحہ ہو جو ساری عید کو ۔۔۔۔ساری عید کو۔۔۔۔۔عید بنا دے!!"

"مجھے نہیں سمجھ آ رہی تمہاری عید کی رٹ۔۔۔۔!!"

"مجھے بھی نہیں آ رہی لیکن مجھے بس لگ رہا ہے۔۔۔ہماری مائیں ایک لنچ سے زیادہ ڈیزرو کرتی ہیں۔۔۔۔۔وہ مائیں ہیں ہماری۔۔۔ڈا نٹنے والی۔۔۔۔۔کبھی کبھی ہا تھ جڑنے والی۔۔۔۔ہمیں سوتے میں پیار کرنے والی۔۔۔۔۔ہمارے کام کرنے والی۔۔۔۔۔ہمارے ہر دن کو عید بنانے والی۔۔۔۔۔۔مائیں ہیں ہماری۔۔۔۔۔"
میں نے خود سے کہا تھا صبا سے نہیں ورنہ اب کی دفعہ اس ڈائیلاگ بازی پہ میرا سر ضرور ہی کسی ایکسیڈنٹ سے دو چار ہوتا۔
خیر صبا کے نزدیک میرے ڈائیلاگز ڈائیلاگز ہی ہوں گے۔۔۔میرے نزدیک بھی ڈائیلاگز ہی تھے لیکن فیلنگز۔۔۔۔۔۔فیلنگز بہرحال ڈائیلاگز نہیں تھیں۔اب آپ کہیں گے یہ کیا بات ہوئی۔۔۔۔؟ماں کی خوشی اولاد کی خوشی میں ہوتی ہے۔۔۔عورت بس ممتا ہے۔۔۔
صحیح ہر بات صحیح۔۔۔۔۔۔مجھے بھی تسلیم ہے کہ ہماری مائیں ہم سے بہت پیار کرتی ہیں ۔۔۔۔وہ اپنی ان عیدوں پہ خوش ہوتی ہیں۔۔۔۔
انہیں کبھی ملال نہیں ہوتا۔۔۔۔گھر سے محبت کرنے والی۔۔۔شوہر اور بچوں کے لیے جینے والی۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔
لیکن سنیں۔۔۔۔!!
ہم جن سے محبت کرتے ہیں ،انکے لیے ہمیں ساری دنیا بھی کم لگتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔
تو یہ تو پھر مائیں ہیں۔۔۔ان کی ہماری محبت تو غیر مشروط ہوتی ہے۔۔۔تو ان کے لیے ایک لنچ کیوں۔۔۔۔؟ہو سکتا ہے آپ کی ماؤں اور آپ کے پاس عید کے دن لنچ سے زیادہ کچھ ہو۔۔۔۔مگر میں اپنی امی کی بات کر رہی ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے ہر وقت ڈانٹنے والی میری ماں۔غیر محسوس انداز میں محبت جتانے والی میری ماں ایک لنچ سے زیادہ ڈیزرو کرتی ہے نا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تو آپ بس میری اور میری ماں کی عید کو دھیان میں رکھیں۔۔۔۔!!میری ماں کی عید کیسی گزری۔۔۔۔۔؟میں بتاتی ہوں۔۔۔۔!!

عید کی رات میں اور امی رات دیر تک جاگے۔۔۔۔۔باتیں کرتے ہوئے۔۔۔۔۔۔بہن بھائیوں کے لیے امی کے ساتھ کپڑے پریس کرواتے ہوئے۔۔۔۔صبح کے لیے برتن نکالتے ہوئے۔۔۔۔اور سب سے بڑھ کر امی کو مہندی لگاتے ہوئے،سارہ اور امبر تو شام کو ہی لگوا چکی تھیں۔۔۔۔۔۔سو امی کو زبردستی پیاری سی مہندی لگا کے اپنے لگائی اور پھر۔۔۔۔۔سو گئی۔۔۔۔۔اگلے دن میں بالکل بھی سب سے پہلے تیار نہیں تھی۔۔۔۔۔مجبوری تھی۔۔۔۔۔۔میرے واش روم میں سارہ اور امبر باری باری نہائیں اور پھر میں نے ہی انہیں تیار کیا۔۔۔۔۔۔۔۔اشعر تو تیار ہو کے چلا گیا تھا البتہ مبشر کو امی نے ہی تیار کیا۔۔۔۔۔۔۔۔ان کے جانے کے بعد امی کچن میں گئیں۔۔۔۔۔۔۔۔ہمیشہ کی طرح سویاں بنائیں۔۔۔۔۔اور میں نے سالن کے لیے ساری کٹنگ کردی۔۔۔۔۔جب تک امی محلے والوں کو سویاں بھجوا کر فارغ ہوئیں۔۔۔۔میں کٹنگ کر کے تیار ہو چکی تھی۔۔۔۔۔امی سالن چڑھا کر نہانے چلی گئیں اور میں نے سالن میں چمچ ہلانے کے ساتھ ساتھ آٹا بھی گوندھ دیا۔امی نے آ کر روٹیاں بنائیں اور میں نے بغیر امی کے کہے سیلیڈ بنایا۔۔۔۔دہی بڑے بنائے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور پھر ٹیبل سیٹ کیا۔۔۔۔۔۔اور حیرت انگیز بات ہوئی ،ابھی ابو اور بھائی نماز پڑھ کر نہیں آئے تھے۔۔۔۔امی کے پاس ٹائم تھا ۔۔!!امی نے بال خشک کر کے کنگھی کی۔۔۔۔۔میں نے انہیں چوڑیاں پہنائیں۔۔۔۔۔اور وہ لپ سٹک جو امی مجھے نہیں لگانے دیتی تھیں وہ یہ کہہ کر لگا دی کہ لگا لیں ورنہ ضائع ہی جائے گی پڑی پڑی۔۔۔۔امی کو لپ سٹک لگانے کا اس سے معقول جواز کوئی اور لگ ہی نہیں سکتا تھا۔سو لگا لی اور جب ابو گھر آکے ہم سے عید مل کے کچن میں سالن ڈونگے میں نکالتی امی کے پاس گئے تو میں اشعر،مبشر،سارہ اور امبر ہم سب نے مل کر اپنی اپنی متوقع عیدی گنی کیوں کہ مجھے بھول گیا تھا کہ کس کس نے دینی ہے؟
خیر کھانا ہم نے خوشبوؤں میں مہکتی امی کے ساتھ کھایا۔ابو اپنے دوستوں کے پاس چلے گئے اور میں سارہ اور امبر اپنی دوستوں سے ملنے۔۔۔۔۔لیکن ٹھہریے اکیلے نہیں ۔۔۔۔۔بھئی امی بھی ساتھ تھیں۔۔۔۔۔۔۔ہاں اور ہم چار بجے کے قریب گھر تھے۔۔۔۔۔۔
گھر آ کے سب سے پہلے تو ابو کو فون کر کے بلایا۔۔۔۔۔اشعر مبشر کو بھی بلایا۔۔۔۔۔اور پھر پیار سے شکوہ کیا۔۔۔۔۔۔
"ابو آج تو عید ہے ۔۔۔آج کا دن تو ہمارے ساتھ گزاریں۔۔۔۔۔۔۔۔۔" شکوے میں منہ بسورنے کے ساتھ آنکھ میں پانی بھی شامل ہے۔۔۔۔۔۔۔اجی ،پھر ابو،میں ،امی،امی کے دو سپوت اور دوسری دو دخترائیں' نیکیاں اور اُخترائیں سب نے تقریبا دو گھنٹے گپیں ماریں مطلب باری باری ایک دوسرے کی ٹانگیں کھینچیں۔۔۔۔۔۔۔۔دو باتیں ذہن میں رکھیے گا ایک تو ٹانگیں کھینچنے میں ابو،امی ،اور میں برابر کے شریک تھے۔۔باوجود کہ ہم نے اپنی ٹانگیں کسی کو کھینچنے نہیں دیں۔۔۔۔اور نمبر دو کہ ٹانگیں کھینچنا بالکل وہی محاورہ ہے جسکا کچھ کچھ مطلب
ہلکی ہلکی،دوستانہ قسم کی بے عزتی ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔اب کرنے کو تو میں دوستانہ کی بھی وضاحت کر سکتی ہوں کہ یہ دوستی سے نکلا ہے ،فلمی دوستانہ نہیں لیکن پھر کہانی پیچھے ہی رہ جائے گی۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں تو گپیں مار کے میرے بھائی اشعر نے چھت پہ دو اینٹیں رکھ کے چولہا بنایا۔ابو نے چکن کے پیسز کو مصالحہ لگایا۔مبشر نے سیخیں ارینج کیں اور سارہ اور امبر نے برتن نیچے سے اوپر پہنچائے۔۔۔۔۔۔
﴿میں صرف ہاتھ سے کرنے والے کام ہی نہیں کر سکتی۔۔۔۔۔۔۔امی کہتی ہیں﴾میں امی کے ساتھ بیٹھ کے یہ جائزہ لے رہی تھی کہ ابو زیادہ سگھڑ ہیں یا اشعر۔۔۔۔بیچ میں امی کی رگِ زنانہ کئی دفعہ مس پلیس ہوئی لیکن میری وجہ سے جلدی سیٹ ہو جاتی تھی۔۔۔۔۔آہ ایک خوبصورت سی شام۔۔۔۔جو زیادہ خوبصورت صرف اور صرف میرے بنائے گئے رائتے کی وجہ سی ہوئی کہ میں رائتے کا رسک نہیں لینا چاہتی تھی۔۔۔۔۔۔۔اور ہاں رات کو انکل قادر نے اپنے گھر بلایا تھا۔۔۔امی ابو کو۔۔۔۔۔امی ابو ان کے گھر چلے گئے۔۔۔۔۔۔
تقریبا بیس پچیس منٹ کے بعد مجھے یاد آیا کہ امی صائمہ کو دینے والا گفٹ تو گھر ہی بھول گئی ہیں۔۔۔۔میں نے انکل قادر کے گھر فون کیا۔۔۔۔۔۔۔صائمہ ہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دوست ہے میری۔۔۔۔۔صبا سے کم۔۔۔۔کپڑوں پہ تبصرے شروع ہوئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور ختم اس بات پہ ہوئے کہ اس کی امی درزن کے گھر کل کا سوٹ لینے گئیں ہیں۔۔۔درزن نے کہا تھا شام کو دے گی لیکن اس کی امی نے کہارات کو ہی دے دینا ۔۔۔۔۔۔ای ٹی سی،ای ٹی سی۔۔۔۔۔۔!!

"لیکن میرے امی ابو کہاں ہیں پھر۔۔۔۔۔؟اب گھر آئے مہمانوں کو چھوڑ کے تو کوئی سوٹ لینے نہیں جاتا نا۔۔۔۔۔۔۔"

"تقریبا دس منٹ پہلے نکلے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔!!"

فون بند کر کے میں سوچ میں پڑ گئی اتنی دیر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دیکھی دس منٹ کے علاوہ وہ وقت بھی شامل کر لیجیے گا جو میں نے اور صائمہ نے فون پہ لگایا۔۔۔۔اور میں بولتی بہت ہوں اور زبان شروع ہو جائے تو رکنے کا نام نہیں لیتی ۔۔۔۔امی کہتی ہیں!!
ہاں مزید دس منٹ گزر گئے۔۔۔۔۔۔۔۔امی اور ابو آ گئے۔۔۔۔۔۔امی کے ہاتھ پہ بیلے کا گجرا بندھا تھا۔۔۔۔۔۔۔
یقین مانیے میں نے صبح صرف چوڑیاں پہنائی تھیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں نے حیرانی سے آنکھیں مٹکائیں۔۔۔۔یہ بات میں نے صبا کو بھی نہیں بتائی۔۔۔۔۔۔۔۔اور خود بھی کبھی نہیں سوچا کہ گجرا کہاں سے آیا۔۔۔۔ہاں لیکن اس رات مجھے شدید تھکن کے باوجود﴿تھکن کو جسمانی تھکن ہی لیجیے گا۔۔۔۔ہاتھ کی جگہ زبان چلا کر بھی میرے ذہن کی بجائے جسم ہی تھکتا ہے﴾گہری نیند آئی اور خواب میں ۔۔۔۔
امی ڈانٹتے ہوئے نہیں ۔۔۔بلکہ گجرے کے ساتھ مسکراتی ہوئی نظر آئیں۔۔۔۔۔۔یہ رات کے پہلے پہر کی بات ہے۔۔۔۔۔۔۔
باقی رات میں جاگتی رہی تھی اور اس خواب کے ہمیشہ آنے کی دعائیں مانگتی رہی تھی۔۔۔۔۔کیونکہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔
کبھی امی کی ڈانٹ کے بغیر خواب آیا جو نہیں۔۔۔!!