002 - آیت و حدیث

آیت اور حدیث
-----

بِسۡمِ اللہِ الرَّحۡمٰنِ الرَّحِیۡم

مَنۡ كَانَ يُرِيۡدُ حَرۡثَ الۡاٰخِرَةِ نَزِدۡ لَه فِیۡ حَرۡثِه وَمَنۡ کَانَ یُرِیۡدُ حَرۡثَ الدُّنۡیَا نُؤۡتِه مِنۡھَا وَمَالَه فِی الۡاٰخِرَةِ مِنۡ نَّصِيۡبٍ ہ (سوره شورٰی: رکوع ۳)۔

ترجمه : جو شخص آخرت کی کھیتی کا طالب ہو (یعنی جیسا کھیتی کے لئے بیج بویا جاتا ہے پھر اس کو پانی وغیرہ دیا جاتا ہے تاکہ پھل پیدا ہو اسی طرح وہ آخرت کی کھیتی کرنا چاہتا ہے اس کے لئے بیج ڈال کر اس کی پرورش کرتا ہے ایمان سے اور اعمالِ صالحہ سے) ہم اسکے لئے اس کی کھیتی میں ترقّی دیں گے اور جو دُنیا کی کھیتی کا طالب ہو (کہ ساری کوشش اسی زندگی پر خرچ کر دے) تو ہم اس کو دُنیا میں سے کچھ دے دیں گے اور ایسے شخص کا آخرت میں کچھ حصّہ نہیں ہے۔

حدیث مبارکه :- حضرت عبداللہ بن قرط رضی اللہ تعالٰی عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ سب سے اوّل جس چیز کا سوال بندے سے ہوگا وہ نماز ہے اگر وہ ٹھیک اتری تو اس کے سارے اعمال ٹھیک اتریں گے اور اگر وہ خراب نکلی تو اس کے سارے اعمال خراب نکلیں گے۔ (طبرانی اوسط ۔۔ حیٰوة المسلمین)۔