004 - نعت از حسن آتش چاپدانوی

صلّ علی محمّد، صلّ علی محمّد

یا رب یہ التجا ہے
تجھ سے میری دعا ہے
رگ رگ میں نور بھر دے
دل میں سرُور بھر دے
یہ دل ہے جس کا شیدا
دکھلا دے مجھ کو طیبہ
در پر میں مصطفٰے کے
محبوب کبریا کے
نغمہ سرا رہوں گا
ہونٹوں سے یہ کہوں گا

صلّ علی محمّد، صلّ علی محمّد

ہے شام اور سحر میں
راتوں میں ، دو پہر میں
پتھر میں اور گہر میں
انجم میں اور قمر میں
ہے نور مصطفٰے کا
یعنی کہ خود خدا کا
کیوں نہ کروں میں پیہم
یہ وردِ اسمِ اعظم

صلّ علی محمّد، صلّ علی محمّد

منصب ترا جدا ہے
تو شاہِ انبیا ہے
ہر درد کی دوا ہے
بس تیرا آسرا ہے
کاندھے پہ کملی کالی
میں ہوں تیرا سوالی
ہر دل پہ حکمراں ہے
قبضے میں دو جہاں ہے
تو لائقِ ثنا ہے
ہر ذرہ نغمہ خواں ہے

صلّ علی محمّد، صلّ علی محمّد