003 - نعت از فرید ندوی.

شہکار آئینہ

طیبہ میں ہے خدا کا جو شہکار آئینہ
کب لا سکا وہ مصر کا بازار آئینہ

دنیا کو دے گئے ہیں جو سرکار آئینہ
ہر عہد کے لئے ہے وہ معیار آئینہ

ہر طور سے منارۂ نورِ ہدیٰ ہیں آپ
گفتار ہے چراغ ، تو کردار آئینہ

ہر آئینے میں حیرت و حسرت ہے اس لئے
کر پایا کیوں نہ آپ کا دیدار آئینہ

دنیا میں آج بھی ہیں صحابہ کے فیض سے
لیل و نہارِ سیدِ ابرار آئینہ

ہے لفظ لفظ نورِ نبوت سے مستنیر
اِس واسطے ہیں نعت کے افکار آئینہ

وہ آئے تو جہالت و ظلمت فرو ہوئی
کون و مکاں کے سب ہوئے اسرار آئینہ

شفاف آئینہ ہے حیاتِ نبی فرید
سر تا قدم ہیں پیکرِ انوار آئینہ