Afsana 037 کیسے پہنچوں "پی " کے دوارے از مونا سید

کیسے پہنچوں "پی " کے دوارے
از مونا سید (کراچی، پاکستان)

تیز' تیز اور تیز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بس تھوڑی سی ہمت اور ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بھاگتے بھاگتے اب اس کے پیر تھکنے لگے تھے۔ سانس اس کے قابو سے باہر ہوا جا رہا تھا۔ پسینہ ایسے بہہ رہا تھا کہ اس کے بھاگتے قدموں کے نشان بن رہے تھے۔
اور کان ان پیچھا کرتے قدموں کی ان آہٹوں پر تھے جو اس کے پیچھے تھے۔۔
دھک دھک دھک ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دل کی دھڑکن کا شور ایسا تھا کہ کان باہر کی آوازیں سننے سے قاصر ہوئے جا رہے تھے۔۔
ایک ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تین ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔ ٭

" ایک دو تین ۔۔۔۔ پہچانو! بھلا میں کون ہوں ؟" پکھی کی ہنسی ہی اس کی پہچان تھی۔ کھلکھلاتی ہوئی جیسے ہر سو جلترنگ بج رہے ہوں۔۔
" بابا کی جان ! بابا تو تجھے تیری آہٹ سے پہچان لیتا ہے۔۔۔۔۔"
" جا ! میں نہیں بولتی تجھ سے۔۔ یوں جھٹ سے پہچان لیا۔۔۔۔۔۔۔۔" یہ کہتی ہوئی وہ فقیرے کے پیچھے سے اس کے آگے آکر بیٹھ گئی۔
بڑی بڑی روشن آنکھیں، کتابی چہرہ متناسب قدوقامت۔۔ " ایسی بیٹیاں تو ہم بنجاروں میں بڑی قیمتی ہوتی ہیں۔۔" فقیرے نے دل ہی دل میں اس کی بلائیں لیں۔۔۔
" لے اتّا سا تجھے پالا۔۔۔۔۔۔۔۔ تجھے نہیں پہچانوں گا پھر کسے پہچانوں گا ۔۔۔۔"
" بابا! سچ مچ بتانا کیا تو مجھ سے بہت محبت کرتا ہے۔۔ جیسے چاند ستاروں سے ، سورج آسمانوں سے۔۔۔۔ اور ، اور ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور۔۔
"بس بس ۔۔۔۔۔۔اب سانس بھی لے لے ۔۔۔۔"

٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭

سانس لینے کی مہلت نہیں تھی۔ اس کا گھیر دار لباس اس کی راہ میں رکاوٹ بن رہا تھا۔ سامنے والی پہاڑی ۔اس پر بل کھاتی پگڈنڈی۔۔۔۔ اس کے پار تھی اس کی منزل ۔۔۔۔۔۔۔۔ مگر قدم تھے کہ ساتھ دینے سے انکاری تھے۔۔۔
شدت سے چاہت سے تھی دو گھڑی رک کر بےقابو ہوتی سانس کو قابو میں کرلے، زبان کو چند بوند پانی میسر آجائے،کہ ۔۔۔۔ قدموں کے نیچے کوئی کانٹا آگیا ۔۔

٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔ ٭

" اففف ! ہائے میں مری۔۔" درد کی شدت سے آنکھوں کے کٹورے بھر آئے تھے۔
شاہ سائیں کے مزار کی سیڑھیاں چڑھتے ہوئے یہ واقعہ پیش آیا ۔ رواج تھا کہ سب ننگے پیر ان کے مزار کی سیڑھیاں چڑھتے ہوئے جو منت مانگو وہ پوری ہوتی تھی اور جس کو پورا نہ ہونا تھا کوئی رکاوٹ آ جاتی تھی۔۔
" تو ۔۔۔۔۔۔۔۔ کیا میری نیت میں کوئی کھوٹ ہے سائیں ؟" وہ چپ چاپ سیڑھی پر بیٹھی سوچتی رہ گئی۔۔
" مم ممم ۔۔۔ مممم " اس سے آگے اس سے سوچا ہی نہیں جا رہا تھا۔۔ وہ اپنے غم میں مگن تھی کہ آس پاس کی کچھ خبر ہی نہیں رہی۔۔
اس کی یہ بےخبری کسی کے ہوش اڑا لے گئی۔۔ مزار کی سیٹرھیوں پر بیٹھی ایک لڑکی، جس کا لباس ہی اسے خانہ بدوش ظاہر کر رہا تھا۔ مگر رنگ روپ سب سے نرالا تھا یا شاید اسی کو لگا۔۔۔۔۔۔۔ سونے میں تولے جانے کے قابل۔۔

٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔ ٭

" سونا اور وہ بھی 100 تولہ " منشی کی آواز شدت حیرت سے پھٹ سی گئی۔۔
" فقیرے اپنی اوقات میں رہ' " حکم " کے حکم کی دیر ہے ، نہیں تو تم بنجارے یہاں نظر بھی نہ آؤ۔۔۔"
" پر منشی تم مانگ بھی تو ہیرا رہے ہو اس کے بدلے اتنی قیمتی چیز تو ہونی ہی چاہیئے۔۔۔"
رائے بہادر سورج مل کو پکھی کا من موہنا روپ گھائل کر گیا تھا، بنجاروں کے رواج کے مطابق اس نے اپنے منشی کو مول تول کرنے بھیجا تھا۔۔۔ اور اس انمول کا مول لگا تھا 25 تولہ سونا اور سال بھر کی اجناس۔۔۔
فقیرے کی آنکھوں کی چمک دیدنی تھی۔۔

٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔ ٭

آپس میں انہوں نے کبھی بات نہیں کی تھی مگر ان کی آنکھیں بولتی تھیں اور خوب بولتی تھیں ۔۔۔ فضا میں جیسے سُر سے گونجنے لگتے ، سینکڑوں بلبلیں اک ساتھ کوکنے لگتیں ، ایسے میں پکھی چاہ کر بھی اس سے نظر نہ چرا پاتی۔۔
کبھی اس کی نظریں کہتیں " اے روپ نگر کی رانی ! تم کون ہو؟"
پکھی کی نظر کہتی " ہائے رام ! مجھ میں ایسا کیا ؟"
اس کی نظر کہتی " تم میں ایسا ہے کہ چلتے ہرن چال بھول جائیں ، پھول اپنی خوبصورتی کو بھول جائیں اور شکاری شکار کرنا بھول جائیں۔۔۔"
پکھی کی نظر کہتی" دھت ہو نا شکاری ! کردی عجیب بات ۔۔۔"

وہ شکاری تھا ۔۔ بس گاؤں والوں کو اتنا معلوم تھا، کون تھا، کہاں سے آیا ہے۔۔ اس بارے میں کسی کو کچھ علم نہ تھا ۔۔ صحرا میں بےہوش پڑا ملا تھا اور ساتھ میں بس ایک تھیلہ اور ایک شکاریوں والی بندوق تھی۔۔ زخم گہرے تھے اس لیے بنجارے اٹھا لائے۔۔ شروع میں تو توقع ہی نہیں تھی کہ بچے گا مگر وہ ڈھیٹ نکلا زندگی کی طرح جو ہزاروں جانیں لے کر بھی جیے چلی جاتی ہے۔۔
جب سے ٹھیک ہوا تھا بس چپ چاپ آکر گاؤں کے باہر والے کنوئیں کے پاس بیٹھ جاتا اور گھنٹوں چپ بیٹھا رہتا۔۔ جیسے اس کو کسی سے کوئی سروکار ہی نہ ہو۔
اور یہیں دھیرے دھیرے پکھی اور اس کا پیار پروان چڑھا ۔۔۔ اتنا خاموش پیار کہ ساتھ چلنے والی ہواؤں کو بھی گمان نہ ہوا۔۔
٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭

گمان تو اس کو بھی نہیں تھا کہ اس کو اتنا پیار کرنے والا بابا اس کے ساتھ یہ کرے گا۔۔۔۔ اس کا سودا۔۔۔۔۔ وہ تو آج بابا کو اپنے پیار سے متعلق بتانے اور اس کو مانگنے آئی تھی۔۔اس بھروسے کہ بابا اس کی ہر بات مانے گا۔۔مگر دروازے میں سے منشی اور فقیرے کی گفتگو سن کر اس کے پیروں تلے زمین نکل گئی۔۔
" بابا ! یہ تم کیا کر رہے ہو؟" وہ غصے سے کانپتی ہوئی آواز میں بولی۔۔
منشی ایک نگاہ غلط اس پر ڈالتا، دروازے سے باہر نکل گیا۔۔

" ری ہوش میں رہ ۔۔" فقیرا بولا۔۔" کیا بنجاروں کے رواج بھول گئی ہے۔۔۔۔۔"
" پر بابا تو تو مجھ سے سورج،چاند اور ستاروں سے بھی زیادہ پیار کرتا ہے۔۔۔" شدت غم سے اس کی آواز بھرا گئی۔۔
" کل تیری سورج کے ساتھ رخصتی ہے۔۔" فقیرا کمرے سے باہر نکل گیا ۔۔۔
بھلا سونے کے آگے سورج ، چاند کی کیا اوقات ۔۔

٭ ------------- ٭ ------------- ٭

رخصت ہونے سے پہلے اس نے ایک بار اپنے باپ سے بات کرنے کی ٹھانی۔۔۔" بابا ! میں یہ نہیں کرسکتی۔۔"
" کیوں نہیں کرسکتی ۔۔۔ تجھ سے پہلے تیری ماں نے یہ کیا ۔۔ تو ، تُو کیوں نہیں کرسکتی۔۔۔۔ ویسے بھی بیٹا اگر یہ نہ کریں تو کھائیں گے کیسے ؟ دیکھ سارے قبیلے کا سوال ہے اور جب سورج مل کا دل تجھ سے بھر جائے گا تو ،تُو واپس آجانا ۔۔۔۔۔۔۔" یہ تو اس کے لیے گویا کوئی بات ہی نہیں تھی۔۔۔

" مم ۔۔ مگر مگر میں ۔۔۔۔۔۔۔۔" بات کرنے کی پکھی کی ہمت ہی نہیں ہوئی۔۔
" چچ ۔۔ اس سے عورت کوئی میلی تھوڑی ہوتی ہے۔ "
چل شاباش بیٹا! ہنسی خوشی راضی ہوجا ۔ میں نے بھی تیری ماں کا پورے ایک سال انتظار کیا تھا۔۔"

٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭

ایک سال نہیں کئی سال گزرے۔ اس کی رخصتی کو ۔۔۔۔ سورج مل نے اس کو بےحساب چاہا۔۔ رانیوں کی طرح رکھا ۔ مگر اس کو تو گھن لگ گیا تھا ۔۔۔۔۔ محبت گھن کی طرح ہی تو ہوتی ہے۔۔بظاہر عمارت کھڑی نظر آتی ہے مگر اندر سے کھوکھلی ہوجاتی۔۔۔ ایسا ہی اس کے ساتھ تھا۔۔۔۔۔۔کھانا ، پینا ، سونا یہاں تک کہ ایک بچہ بھی اس کی توجہ نہ لے سکا تھا۔۔۔۔ وہ بس کسی مورتی کی طرح تھی انتہائی خوبصورتی سے تراشا ہوا شاہکار جو بول نہیں سکتا بس منجمد رہتا ہے۔۔

٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭

ایسا ہی ایک لمحہ اس کی آنکھوں میں منجمد ہوگیا تھا ۔ جب اپنی رخصتی کا سن کر وہ دوڑی دوڑی اس کے پاس گئی تھی کچھ کہنے ۔۔ نہیں بلکہ پہلی بار کچھ کہنے۔ مگر وہ وہاں سے جاچکا تھا ۔ اپنا ایک پیغام اس کی سہیلی کے پاس چھوڑ کر کہ جانا ضروری ہے۔۔۔ اور اگر کبھی کوئی رابطہ کرنا ہو تو میں اس پتے پر ملوں گا۔۔۔

٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٭

اور آج تین سال بعد وہ لمحہ آگیا تھا جس کا اس کو شدت سے انتظار تھا۔۔۔۔۔۔اس حویلی سے نکلنے کا موقع۔۔۔۔۔۔۔۔ اس کی عزیز سہیلی نے اس کا پیغام پہنچا دیا تھا ۔۔۔۔۔ بس اب اس کو اس جگہ سے نکلنا تھا ۔۔ اس قید سے جہاں اس کی روح قید تھی۔۔
"بس کچھ قدم حوصلہ رکھ پکھی پھر وہ تیرا ہوگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٹرین کی آواز اس کو سنائی دے رہی تھی ۔۔۔" وہ انتظار کر رہا ہوگا پکھی۔۔۔۔ دیکھ اس نے کتنے حوصلے سے تیرا انتظار کیا۔۔۔۔"
اس کے زخمی قدموں نے آخری ہمت دلائی اس کو ۔۔۔ اس کی پیروں نے پلٹ فارم کی زمین کو چھوا۔۔۔۔۔ پہلی بار کچھ راحت محسوس کی اس کی سانسوں نے۔۔۔
بس چند قدم اور ان کے بعد میں اس کے پاس ہوں گی جس کا میں نے سالوں انتظار کیا ۔ جس کی جدائی کواپنے جسم پر جھیلا، اپنی روح کو زخمی کیا ۔۔۔۔۔ اس کے ساتھ ہی اس کے ہونٹ کئی سال بعد پہلی باراس ہنسی سے آشنا ہوئے جس کو سن کر ہوائیں ٹھہر ٹھہر جایا کرتی تھیں۔۔۔
اس کے ساتھ ہی ایک آواز آئی۔۔۔۔۔ مگر اس کے قدم اس سے کہہ رہے تھے مت رکو، سب بھول جاؤ،بس اسے یاد رکھو جو تمہارا ہونے والا ہے، سارے خوف، سارے تردد اب چند لمحوں کے مہمان ہیں۔۔۔
وہ آواز کچھ آشنا سی تھی۔۔۔۔ اس کے دل نے کہا مڑ کر مت دیکھنا ورنہ پتھر ہوجاؤ گی۔۔۔۔ اس آواز میں کچھ ایسا تھا کچھ سنا سنا سا۔۔ کانوں نے اسے شناخت کر ہی لیا وہ بے اختیار مڑی اور پتھر ہوگئی۔۔